زندگی کے غم لاکھوں اور چشم نم تنہا

View previous topic View next topic Go down

GMT - 3 Hours زندگی کے غم لاکھوں اور چشم نم تنہا

Post by plhr60 on Sat Jul 12, 2014 2:54 pm

زندگی کے غم لاکھوں اور چشم نم تنہا

حسرتوں کی میت پر رو رہے ہیں ہم تنہا




مل سکا نہ کوئی بھی ہمسفر زمانے میں

کاٹتے رہے برسوں جادہ ِالم تنہا




کھیل تو نہیں یارو راستے کی تنہائی

کوئی ہم کو دکھلائے چل کے دو قدم تنہا




دل کو چھیڑتی ہوگی یادِ رفتگاں اکثر

لاکھ جی کو بہلائیں شیخِ محترم تنہا




مسجدیں ترستی ہیں اُس طرف اذانو ںکو

اِس طرف شوالوں میں رہ گئے صنم تنہا




اِس بھری خدائی میں وہ بھی آج اکیلے ہیں

خلوتوں میں رہ کر بھی جو رہے تھے کم تنہا




تھی قتیلؔ چاہت میں اُن کی بھی رضا شامل

پھر بھی ہم ہی ٹھہرے ہیں مورد ِستم تنہا
avatar
plhr60
Monstars
Monstars

Aquarius Horse
Posts : 536
Join date : 2011-10-20
Age : 27
--Mood-- : Drunk

Character sheet
Experience:
33/500  (33/500)

Back to top Go down

View previous topic View next topic Back to top


Permissions in this forum:
You cannot reply to topics in this forum